کیا پاکستان میں معاشی انقلاب دستک دے رہا ہے؟

Chandi Technology Letter head

جس وقت گستاخانہ کارٹون کی دلآزار خبریں امت مسلمہ کو بڑی طرح سے جھنجھوڑ رہی تھیں،لگ بھگ انہیں دنوں میں،عید قربان سے دو تین دن پہلے، ضلع ٹھٹہ کے ایک گاؤں میں ایک معجزہ نما ایجاد منظر عام پر دکھائی دی۔سندھ کے ایک چھوٹے سے گاؤں بنام فقیر محمد راجھیرو میں گویا ایک “خوشحالی بم ” چاندی ٹیکنالوجی کے نام سے پھٹا جس سے روزگار کا ناختم ہونے والا آغاز ہوا۔نیز شنید ہے کہ اب مٹی کے گھروں کے بجائے ،دیہاتیوں کو چاندی کے گھروں میں رہنے کو ملے گا۔گوٹھ فقیر محمد راجھیرو کے باسیوں کی حیرت کی انتہا نہ رہی جب انھیں کے مردوں کے ہاتھوں سے بلاک اور پینل کو آگے پیچھے کرنے سے انکی تمام ضروریات چند منٹوں اور گھنٹوں میں پوری ہو گئیں؛ جیسا کہ گشتی بیتل خلاء،پانی کا حوض،عالی شان کمرہ ،بسترہ،سوفا،میز وغیرہ۔

لوگوں نے یہ بھی دیکھا کہ تمام اشیاء ( کمرہ حوض وغیرہ )کو باآسانی تور تار کر ایک جگہ سے دوسری جگہ منتقل کیا جا رہا تھا۔مزید برآں ،ایک بنا ہوا کمراہ چار اضافی کمرے کا اندیا دے رہا تھا۔یہاں پر یاد رکھا جائے کہ چاندی ٹیکنالوجی شہر کراچی کی منفرد ایجاد ہے۔جس پر گزشتہ 24 سالوں سے تجربات کئے جا رہے ہیں۔اور جس پر کراچی کے مخیر حضرات کے قرور ھا روپے خرچ ہو چکے ہیں۔بقول ایک معروف امریکی صحافی کے چاندی ٹیکنالوجی ایک high tech innovation ہے ۔
پچھلے دنوں جو کام ٹھٹہ میں ہوا ہے وہ دراصل اس ایجاد کے مکمل ہونے کی صورت میں تھا۔

Gul Bahao puts up Chandi Ghar at Thatta

Pictures of the “KHUSHHALI BOMB,” Pakistan Exploded on the 14th of August 2018 in a village of district Thatta called Goth Faqir Mohammed Rajero.

Using the CHANDI TECHNOLOGY, a Karachi based invention, (consisting of PRE-FAB blocks and panels), the villagers were amazed to see that most of the necessities of life viz. Water Reservoir, Mobile Toilet, a Spacious Room, Bed, Sofa etc.took only a few minutes or hours to assemble.

Here, it may be remembered that District Thatta is known to be the Gateway of Islam in the subcontinent. Will it also be the nursery of Pakistan’s KHUSH HALI Bomb ?

Thatta Photos

SAVE THE WORLD with CHANDI TECHNOLOGY

KPC Exhibition

Book Launching at Karachi Press Club
Book Launching at Karachi Press Club

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

Recently, Gul Bahao, in collaboration with the Dept. of Developmental Studies NED University held a one day event “Saving the World with Chandi Technology at Karachi Press Club.” – an exhibition of the organizations research products made from waste material.The exhibition was jointly sponsored by well known philanthropist Sardar Yasin Malik,Hamdard Foundation,and well known t.v artist Sarwat Gillani.A detailed discussion with the CEO of Gul Bahao, Nargis Latif, gave deep insights into its program which is bent upon “Turning Garbage into Gold”.

These days the organization is increasingly talking about a “new technology” i.e prefabricated, modular blocks which will be as “sensational as the mobile phone …We started with the goal of cleaning up Karachi through experimenting and recycling and ended up with commercially viable products, very useful for people”, claims Nargis Latif.

Cynicism aside, credit must be given to the organization for putting up a solid room, a 10×40 feet swimming pool and a temporary wall/screen in just a few hours in the backyard of the KPC.
The place wore a festive look with young girls and boys moving around trying to explain to visitors what the exhibition was all about. Patriotic songs were being played on the sound system. The best part of the exhibition was the bright sunshine which made everything glitter.
What gave the event a sanctified look were three cut outs of trees along with their branches bearing translations of the Holy Quran in English, Urdu and Sindhi. These were placed at the entrance of the club.

Here it may be mentioned that Karachi, one of the biggest metropolises of the world is also known for the mountains of garbage lying all around. The head of Gul Bahao maintains that by recycling all kinds of plastic waste, her organization has in effect solved a world wide problem of environment pollution.

According to Nargis, shopping bags wrappers and thermopole are the biggest culprits in waste management. These are either burnt leading to high atmospheric temperatures/pollution, allowed to clog the drainage system or pollute water courses. Gul Bahao has spent millions of rupees and spent 24 years conducting experiments to produce useful goods from waste material separated at source. Once these innovations enter the market and are reproduced en masse, environmental pollution will be controlled and the worlds natural environment restored, or so claims the organizational head.

According to Nargis, the Chandi Technology will charge up the business environment, due to its usefulness. Explaining the technology, Nargis said it comprises of modular blocks and panels made from metallic film and thermopole waste. Pointing to the items on display, Nargis said entire rooms, warehouses, water reservoirs can be installed in a matter of just a few hours and removed just as quickly. This aspect she said is especially useful in rented premises or where ever mobile pre-fabricated structures are required. These structures are also inter convertible
For example a classroom can be converted into a ware house or shop or a water reservoir or even a bed and vice versa. What is more, the roof of a structure can be converted into furniture, partitions,walls etc.

Pointing to what looked like a partition wall, Gul Bahao’s spokesman Mohammad Hannan, said, “This is the latest addition to our stock of innovations. This is my own personal invention-what we refer to as thermopole panel. Now we are looking into making light weight structures”, he said
Talking about the advantages of this modern day technology, Nargis mentioned its durability and longevity due to its plastic nature and insulation. Cool in summer,warm in winter (this quality of the Chandi Ghar especially appealed to the visitors), strong against the elements, huge block size hence plenty of space for inbuilt cupboards, extend able in all four directions due to sheer strength of the columns, custom made etc etc.

According to Arsalaan, the event manager “More than 150 houses have been installed all over Pakistan during the last 15 years or so. One structure was put up 9 years ago, another 5 years ago, still another 3 years ago which have passed the test of time. Our work is being acclaimed on websites all over the world”.

When asked “If this technology is so good, why has it not become common”, pat came the answer “People are hide bound. They refuse to accept new ideas. When the tried and tested CNG was first introduced in Pakistan, no one was bothered for years. People used to say it would destroy the engines (of the vehicles). I dont need to tell you how successful it is now.”
To the question what are the future prospects and programs of the organization, the CEO of Gul Bahao replied, “The ball is in the court of our businessmen and entrepreneurs. Our work was to experiment and innovate. We have done our bit”.

کراچی کا تحفہ دنیا کے لیے !

کرا چی کا شمار اس کرہ ارض کے بڑے شہروں میں ہوتا ہے۔ اس لیے ٰیہ ہو ہی نھیں سکتا کہ یھا پر ہو نے والی کوئی بھی تخلیق بین الاقوامی شھرت حاصل ٰنہ کر پائے۔ یہی وجہ ہےکہ ’چاندی ٹیکنالوجی‘ کی بازگشت ملکوں ملکوں ( امریکہ، جنوبی کوریا، ہندستان، برطانیہ سمیت اقوام متحدہ کے مختلف اداروں) میں سنائی دے رہی ہے۔

دلچسپ بات تو یہ ہےکہ اس لا زوال ایجاد کے تخلیق کار یعنی گل بہاؤ ٹرسٹ (جوکہ ایک ماحولیاتی این جی او) ہےکے وہم گمان میں بھی نہ تھا ان کی ’کچرا دو سونالو’ مہم بڑھتے بڑھتے ایک ایجادکی موجب بن جائےگی جو تحکیق و تخلیق کی دنیا میں تحلکہ مچا دے گی۔ کراچی والے بخوبی جانتے ہیں کہ چند سال پہلے مختلف قسم کا ضائع شدا خام مال جسے عام طور پر لوگ کچرا سمجھ کر پھیکتے تھے ‘ گل بہاو‘ کی جانب سے خالص سونے اور پیسے کے اوز لیا جاتا تھا۔

اس پوری محم میں ہزاروں افراد نے حصہ لیا جن میں بڑی تعداد نوجوانوں کی تھی جو فیکٹریوں، دوکانوں، تعلیمی اداروں وغیرا سے یے خام مال جمہ کرکے بزریعہ ٹرک اور سوزوکی گل بہاؤ کے تحکیکاتی مرکز پہنچاتے تھے۔ اس خام مال پر دنوں نھیں بلکہ دودہایوں تک یعنی ۱۹۹۵؁ سے لے کر اج تک تجربات ہو رہے ہیں۔

ان تجربات کا مقصد ضرورت کی چیزوں کا حصول ہے جن میں کمرا، بیت الخلا، بسترا، پانے جمع کرنے کا حوض، میز، کرسی، صوفہ وغیرا شامل ہیں۔ ان چیزوں میں صرف استعمال کی سہولت ہی نھیں بلکہ پائداری، خوبصورتی اور ارزان قیمت جیسی خوبیاں بھی شامل ہیں۔ ۱۹۹۵؁ سے لے کر اج تک نوجوانوں نے بڑی تعداد میں حصہ لیا، یہ ہنرمند نوجوان خوا وہ تعلیم یافتہ ہوں یا ان پڑھ اس ادارے کے لیے ایک فوجی دستے سے کم نھیں ہیں۔

یوں تو تحقیق اور تجربے کا شعبہ دنیا کا محنگا ترین شعبہ ہے کیوں کہ اس میں جب تک تیر اپنے نشانے پر نھیں لگتا ایسا محسوس ہوتا ہے کہ یہ وقت اور پیسے کے ضیعا کے سوا کچھ نھیں۔ یہی وجہ ہے کے اب تک لاکھوں نہیں بلکہ کڑوڑوں روپے خرچ ہو چکے ہیں۔

سوال یہ ہے کہ اتنا سارا پیسا کہاں سے ایا ؟

اللہ کی معارفت اور تاید کے بغیر اتنا بڑا کام ٓانجام دیا ہی نھیں جا سکتا۔ بظاہر اس کام میں کراچی کے لوگوں کا بے تحا شا پیسہ شامل ہے۔ ان میں بیوپاری بھی ہیں تو اسکول، کالج اور یونیور سٹیوں کے اساتزہ بھی مختلف پیشے سے تعلق رکھنے والے افراد جن میں انجینئر، ڈاکٹر بھی شامل ہیں۔ اس کارے خیر میں خواتین بھی بھر پور حٖصہ لیتی رہی ہیں۔

یہ تمام افراد بطور زکوۃ پیسے دیتے رہے ہیں۔ اس کار خیر میں سردار یاسیں ملک، سید اللہ والا، زاہد ادمجی اور عنبریں بشیر نے گل بہاو کا بڑھ چڑھ کر ساتھ دیا ہے۔ اس مہم کو کمشنر کراچی شعیب صدیقی کی سرپرستی بھی حاصل ہوئ ہے۔ گل بہاؤ کے ریسرچ سینٹر میں اب تک بہت ساری عقل کو حیران کر دینے والی ایجادات تخلیق ہو چکی ہیں لیکں ان میں سب سے نمایاں ‘چاندی ٹیکنا لوجی‘ ہے جو کہ دو قسم کے بلاک اور پینل کو ملا کر بنائ جاتی ہے۔

چاندی ٹیکنا لوجی سے مندرجہ زیل اشیاء بااسانی بنائ جاسکتی ہیں۔ مثلا دومنزلہ مکان اور بعد میں اسی مکان کو باآسانی توڑ کر میز، صوفہ، کرسی، بستر اور پانی کا حوض بھی بنایا جاسکتا ہے۔ کہنے والے کہتے ہیں کہ جس طرح موبائل فون نے دنیا بدل دی ہے عین اسی طرح اللہ نے چاہا تو کراچی کے اس تحفہ سے دنیا ایک نئ کروٹ لےگی۔